غیر ملکیوں میں پولیس کی دہشت اور خوف کی وجوہات، غیر ملکی کارکنوں کے ساتھ پولیس کے منصفانہ برتاؤ کے لیے حکومت سے اپیل

ملائیشیا ایک ایسا ملک ہے جو دنیا کے مختلف ممالک سے بڑی تعداد میں غیر ملکی کارکنوں کو راغب کرتا ہے۔ ملائیشیا کے محکمہ شماریات کے مطابق 2020 میں ملک میں تقریباً 2.2 ملین غیر ملکی کارکن تھے۔ ملکی معیشت میں اپنا حصہ ڈالنے کے باوجود یہ کارکن اکثر ملائیشیا کی پولیس کے خوف میں رہتے ہیں۔

ملائیشیا میں غیر ملکی کارکن پولیس سے خوفزدہ ہونے کی کئی وجوہات ہیں۔ اس کی ایک اہم وجہ یہ تاثر ہے کہ پولیس بدعنوان اور بدتمیز ہے۔ پولیس افسران کی غیر ملکی کارکنوں سے پیسے بٹورنے کی متعدد رپورٹس سامنے آئی ہیں، خاص طور پر ان لوگوں سے جو غیر دستاویزی ہیں۔ کچھ معاملات میں، پولیس افسران ایسے غیر ملکی کارکنوں کے ساتھ جسمانی طور پر بدسلوکی کرتے ہیں جو رشوت دینے سے انکار کرتے ہیں۔ اس کی وجہ سے غیر ملکی کارکنوں میں پولیس کا خوف پھیل گیا ہے، جو اکثر جب بھی ممکن ہو ان کا سامنا کرنے سے گریز کرتے ہیں۔

ملائیشیا میں غیر ملکی کارکنوں کے پولیس سے خوفزدہ ہونے کی ایک اور وجہ ملک بدری کا خوف ہے۔ ملائیشیا میں بہت سے غیر ملکی کارکن غیر دستاویزی ہیں، جس کا مطلب ہے کہ وہ قانونی طور پر ملک میں کام کرنے کے مجاز نہیں ہیں۔ اگر وہ پولیس کے ہاتھوں پکڑے جاتے ہیں، تو انہیں ان کے آبائی ملک واپس بھیج دیا جا سکتا ہے۔ یہ بہت سے غیر ملکی کارکنوں کے لیے ایک خوفناک امکان ہو سکتا ہے جنہوں نے اپنے اور اپنے خاندان کے لیے بہتر زندگی کی تلاش میں اپنا آبائی ملک چھوڑ دیا ہے۔ نتیجے کے طور پر، وہ اکثر پولیس کے ساتھ رابطے سے گریز کرتے ہیں اور ان سے بچنے کے لیے چھپے رہنے کی کوشش کرتے ہیں۔

اس کے علاوہ، زبان کی رکاوٹیں بھی غیر ملکی کارکنوں میں پولیس کے خوف میں اضافہ کر سکتی ہیں۔ ملائیشیا میں بہت سے غیر ملکی کارکن مقامی زبان یا انگریزی روانی سے نہیں بولتے ہیں جس کی وجہ سے ان کے لیے پولیس سے بات چیت کرنا مشکل ہو سکتا ہے۔ یہ غلط فہمیوں کا باعث بن سکتا ہے اور غیر ملکی کارکنوں اور پولیس کے درمیان خوف اور عدم اعتماد کو مزید بڑھا سکتا ہے۔

مزید برآں، غیر ملکی کارکنوں کی رہائش گاہوں پر پولیس کے چھاپوں کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں، جہاں پولیس افسران اندھا دھند گرفتاریاں اور غیر ملکیوں کو حراست میں لیتے ہیں۔ اس سے غیر ملکی کارکنوں میں عدم تحفظ اور خوف کا احساس پیدا ہوتا ہے، جو پولیس کی طرف سے روکے جانے اور پوچھ گچھ کے خوف سے اکثر سڑکوں پر سفر کرنے یا پیدل چلنے سے گریز کرتے ہیں۔

ملائیشیا میں غیر ملکی کارکنوں میں پولیس کے خوف کے اہم اثرات ہیں۔ یہ غیر ملکی کارکنوں اور پولیس کے درمیان اعتماد اور تعاون کی کمی کا باعث بن سکتا ہے، جو جرائم سے نمٹنے اور عوامی تحفظ کو یقینی بنانے کی کوششوں میں رکاوٹ بن سکتا ہے۔ اس کا نتیجہ بے ایمان آجروں، مجرمانہ گروہوں، اور ایجنٹوں کے ذریعہ غیر ملکی کارکنوں کے استحصال اور بدسلوکی کی صورت میں بھی نکل سکتا ہے جو ان کی کمزوری اور پولیس کے خوف کا فائدہ اٹھاتے ہیں۔

اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے ملائیشیا کی حکومت کو غیر ملکی کارکنوں اور پولیس کے درمیان تعلقات کو بہتر بنانے کے لیے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ پولیس فورس کے اندر شفافیت اور جوابدہی کو بڑھا کر، بدعنوانی اور بدسلوکی کے خلاف کریک ڈاؤن، اور پولیس افسران کو بہتر تربیت اور وسائل فراہم کر کے کیا جا سکتا ہے تاکہ وہ غیر ملکی کارکنوں سے بہتر طور پر بات چیت کر سکیں۔ اس بات کو یقینی بنانا بھی ضروری ہے کہ غیر ملکی کارکنوں کے حقوق کا تحفظ کیا جائے، اور انہیں من مانی گرفتاریوں، حراستوں یا ملک بدری کا نشانہ نہ بنایا جائے۔

آخر میں، ملائیشیا میں غیر ملکی کارکن بدعنوانی اور بدسلوکی، ملک بدری کے خوف، زبان کی رکاوٹوں، اور اندھا دھند گرفتاریوں اور حراستوں کی وجہ سے پولیس کے خوف میں رہتے ہیں۔ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے حکومت، پولیس، آجروں اور سول سوسائٹی کی جانب سے اس بات کو یقینی بنانے کے لیے ٹھوس اقدامات کی ضرورت ہے کہ غیر ملکی کارکنوں کے حقوق کا تحفظ کیا جائے، اور یہ کہ وہ استحصال یا بدسلوکی کا شکار نہ ہوں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *